مریم نواز کے جسمانی ریمانڈ میں 14 روز کی توسیع

لاہور:‏ احتساب عدالت نے چوہدری شوگر ملز کیس میں مریم نواز کے جسمانی ریمانڈ میں مزید چودہ روز کی توسیع کردی ہے۔مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز اور ان کے کزن یوسف عباس کو احتساب عدالت میں پیش کیا گیا۔ سماعت کے موقع پر نیب پراسیکیوٹر نےعدالت کو بتایا کہ انیس سو بانوے میں چوہدری شوگر مل قائم کی گئی، 2000 سے 2008 تک ملزمہ چوہدری شوگر مل کی شیئر ہولڈر رہیں جب کہ 2015 سے 2016 کے درمیان نواز شریف چوہدری شوگر مل کے مرکزی شیئر ہولڈر بنے۔جس پر وکیل صفائی نے عدالت کو بتایا کہ اماراتی شہری نصرعبد اللہ لوتھا سے رقم وصولی کا کام عباس شریف نے کیا تھا، تفتیشی افسر کے پاس تمام ریکارڈ ہے کچھ بھی برآمدگی کی ضرورت نہیں۔مریم نواز کے وکیل نے کہا کہ خاتون ملزمہ ہونے کی بنیاد پر مریم کے ساتھ بہتر سلوک نہیں کیا جا رہا جس پر فاضل جج نے استفسار کیا کہ مریم نواز کے ساتھ خاتون افسران کون کون ہیں؟نیب پراسیکیوٹر نے بتایا کہ چار خواتین پولیس اہلکار ملزمہ مریم کے ساتھ تعینات کی گئی ہیں، اس موقع پر جج نے مریم نواز سے استفسار کیا کہ کیا آپ کی اٹینڈنٹ خاتون ہے جس پر مریم نواز نے کہا کہ جی سب جیل میں خاتون ہی مجھے اٹینڈ کرتی ہے۔احتساب عدالت میں پیشی کے موقع پر نیب کی جانب سے مریم نواز کے ریمانڈ میں پندرہ روز توسیع کی استدعا کرتے ہوئے کہا گیا کہ مریم نواز سے مزید تفتیش کرنی ہے لہذا جسمانی ریمانڈ میں توسیع کی جائے، مریم نواز نےگزشتہ سماعت پر سیکرٹری اور سی ایف او کے پاس شیئر منتقلی کی دستاویزات موجود ہونے کا بیان دیا تھا۔عدالت نے فریقین کا موقف سننے کے بعد نیب کی جسمانی ریمانڈ کی استدعا پر فیصلہ محفوظ کرلیا جو کچھ دیر بعد سنایا گیا جس میں عدالت نے مریم نواز کے جسمانی ریمانڈ میں چودہ روز کی توسیع کرتے ہوئے اٹھارہ ستمبر کو انہیں دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں