شہباز شریف کی جیل میں بڑے بھائی سے ملاقات، حکومت کیخلاف مارچ پر تبادلہ خیال

اہور: شہباز شریف نے کوٹ لکھپت جیل میں بڑے بھائی سے ملاقات کی جس میں ملکی سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال اور اسلام آباد مارچ کے حوالے سے بھی بات چیت کی گئی ذرائع کے مطابق شہباز شریف نے سابق وزیراعظم نواز شریف کی صحت دریافت کی۔ ملاقات میں خورشید شاہ کی گرفتاری، مولانا فضل الرحمن کے دھرنے اور قصور میں بچوں کے قتل کے معاملے پر تبادلہ خیال بھی کیا گیا۔ملاقات میں شریف خاندان کے خلاف جاری کیسز پر بھی بات چیت کی گئی۔ ذرائع کے مطابق خورشید شاہ کی گرفتاری پر نواز شریف کو تفصیلات سے آگاہ کیا گیا۔جیل ذرائع کے مطابق نوازشریف نے کہا کہ حکومت ساری اپوزیشن کو بھی گرفتار کر لیں ان کو کچھ نہیں ملے گا۔ سب کو جیلوں میں ڈال دیا، سب کچھ اپنے ہاتھ میں کرلیا پھر بھی حکومت مکمل ناکام رہی۔ذرائع کے مطابق نواز شریف نے کہا کہ عوام شدید مشکلات میں ہیں، جو ہم نے کام کئے وہ بھی ٹھپ کر دئیے گئے۔ انہوں نے شہباز شریف کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے بطور وزیراعلیٰ جو زبردست کام کئے، اس کے علاوہ موجودہ حکومت کچھ نہ کر سکی۔شہباز شریف نے مولانا فضل الرحمن کی حکمت عملی کے کچھ اہم معاملات سے متعلق آگاہ کیا اور تجویز دی کہ مولانا کہتے ہیں اکتوبر میں لیکن ہماری تجویز ہے کہ نومبر میں دھرنا لے جائیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ مولانا فضل الرحمان اگر دھرنے میں افراد نہ لا سکے تو وہ فیل ہو جائے گا، دیکھتے ہیں کہ وہ کتنے افراد لانے کے لئے تیاری کرتے ہیں۔نواز شریف نے کہا کہ قصور میں بچوں کے ساتھ زیادتی کے بعد قتل کے واقعات پر بہت افسوس ہے۔ شہباز شریف صاحب! حکومت سے عوام تنگ آ چکی ہے، عوام کا حکومت سے اعتماد اٹھ گیا ہے، جس پر شہباز شریف نے کہا کہ آپ نے درست فرمایا، حکومت عوام کو تحفظ کی فراہمی میں ناکام ہو چکی ہے۔ ملاقات میں ڈینگی کے بڑھتے ہوئے کیسز پر شدید تشویش کا اظہار بھی کیا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں